صفحۂ اول / کاروبار / سابق چیئرمین سینیٹ رضاربانی کی210ارب کےقرضے معاف کرنے پر حکومت پرسخت تنقید

سابق چیئرمین سینیٹ رضاربانی کی210ارب کےقرضے معاف کرنے پر حکومت پرسخت تنقید

ویب ڈیسک : سابق چیئرمین سینیٹ رضا ربانی کا کہنا ہے کہ حکومت نےبڑے بزنس مین کےذمہ 420 ارب میں سے 210ارب روپے کےقرضے معاف کیے ہیں، کھاد بنانے والی کمپنیوں کو 69ارب روپے کافائدہ دیا گیا ہے۔

رضاربانی کےایک بیان میں کہنا تھا کہ حکومت نے بڑے بزنس مین کے ذمہ 420 ارب میں سے 210 ارب روپے کے قرضے معاف کیے ہیں،کھاد بنانے والی کمپنیوں کو 69 ارب روپے کا فائدہ دیا گیا ہے، ان کے ذمہ 138 ارب روپے ہیں، کھاد بنانے والی کمپنیوں نے غریب کسان سے پیسے جمع کر لیے لیکن اسے قومی خزانے میں جمع کرانے سے انکار کیا۔ انہوں نے کہا کہ  ٹیکسٹائل کمپنیوں کے ذمہ 45 ارب روپے تھے جس میں سے 21 ارب معاف کر دیے گئے ہیں۔

سابق چیئرمین سینیٹ نےکہا کہ  پاور پلانٹس کے ذمہ 91 ارب میں سے نصف رقم معاف کر دی گئی ہے۔ انہوں نے کہاکہ سی این جی سیکٹر کے ذمہ 80 ارب میں سے 40 ارب معاف کر دیے گئے ہیں،  کے الیکٹرک اور جینکو کے ذمہ 57 ارب تھے جس میں سے 28 ارب معاف کر دیے گئے ہیں  جو رقم ان کمپنیوں نے صارفین سے اکھٹی کی  وہ انہیں اپنے پاس رکھنے کی اجازت دے دی گئی ہے۔ان کاکہنا تھا کہ  وفاقی حکومت سرمایہ داروں کے بڑے قرضے پارلیمانی سکروٹنی کے بغیر معاف کر رہی ہے،  پارلیمنٹ کو آرڈیننس کو مسترد کرنے کے آئینی حق سے محروم کیا جا رہا ہے۔

مزید خبریں