صفحۂ اول / تازہ ترین / اسلام آباد ہائی کورٹ حملہ، سب کو پتہ ہے وہ کون لوگ تھے، جنہوں نے ہائی کورٹ پر حملہ کیا:چیف جسٹس اطہر من اللہ
Court in Pakistan

اسلام آباد ہائی کورٹ حملہ، سب کو پتہ ہے وہ کون لوگ تھے، جنہوں نے ہائی کورٹ پر حملہ کیا:چیف جسٹس اطہر من اللہ

آن لائن، ویب ڈیسک: اسلام آباد ہائی کورٹ پر حملہ کیس میں چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہا کہ سب کو پتہ ہے وہ کون لوگ تھے، جنہوں نے ہائی کورٹ پر حملہ کیا۔

نجی ٹی وی دنیا نیوزکے مطابق اسلام آبادہائیکورٹ میں حملہ کیس کی سماعت ہوئی۔

چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہاکہ سب کوپتہ ہے وہ کون لوگ تھے جنہوں نے ہائیکورٹ پرحملہ کیا۔

خط لکھاہے، بارکونسلزکی جانب دیکھ رہے ہیں وہ کیاکرتے ہیں۔

چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہاکہ 70 سال سے کچہری کیلئے کچھ نہیں ہوا۔ہم قانونی راستہ اختیارکرسکتے ہیں۔موجودہ حکومت ڈسٹرکٹ کمپلیکس پرکام کررہی ہے۔

چیف جسٹس ہائیکورٹ نے کہاکہ باہرسے کوئی نہیں تھا، آدھے سے زائدوکلاکومیں جانتاہوں، دونوں بارکے صدورکوکہاتھا یہاں آجائیں لیکن وہ نہیں آئے۔

 چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہاکہ اس حکومت نے کچہری کیلئے بہت کچھ کیا۔

کچہری منتقلی کیلئے فنڈزکی منظوری ہوچکی، کام شروع ہونیوالا ہے۔

وزیراعظم نے آرڈر دیا ڈسٹرکٹ کورٹس کی منتقلی میں رکاوٹ نہیں آنی چاہئے۔

اسلام آبادپولیس نے ہائیکورٹ حملہ معاملے پرجے آئی ٹی بنانے کافیصلہ کیا۔

عدالت نے کہاکہ جے آئی ٹی بارکے صدورسے بھی بات کرلے وہ نشاہدہی کریں گے۔

اس معاملے میں ملوث 10،8کے علاوہ دیگرکی نشاندہی بارکرے۔

اگر بارز پہلے دن سے معاونت کرتیں تو بےگناہ وکلا کو ہراساں کرنے کے واقعات نہ ہوتے۔

جو واقعہ میں ملوث ہیں انہیں بھی فیئر ٹرائل کا موقع ملنا چاہیے۔

چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہاکہ احتجاج کی ضرورت ہی نہیں تھی۔جب سے چیف جسٹس بناکچہری کیلئے کام کررہاہوں۔

اسلام آباد ہائیکورٹ حملہ کیس کی سماعت 15 فروری تک ملتوی کردی گئی۔